urdu sex story 2024 (اردو سیکس اسٹوری 2024)

ہیلو دوستو میرا نام پوجا ہے۔ میں ایک گھریلو خاتون ہوں۔ میری عمر 27 سال ہے۔ میرا نمبر 34 26 32 ہے۔ میرے شوہر نے کہا چلو کچھ دنوں کے لیے گاؤں چلتے ہیں۔ اور ہم گاتے چلے گئے۔




مجھ میں بہت کچھ بدل گیا ہے۔ میں پہلے ہی کافی سیکسی ہو گئی ہوں۔ میری ساس، سسر اور میرے بہنوئی گاؤں میں رہتے ہیں۔ میری دیوار کا نام جیون ہے۔ اس کی عمر تقریباً 22 سال ہوگی۔ رنگ کالا تھا لیکن جسم کو کھیت کو کم کرنے کے لیے ٹیگ کیا گیا تھا۔ جب ہم گھر پہنچے تو وہاں صرف میری ساس تھیں۔ پھپھو اور پھوپھی کھیتوں میں گھوم رہے تھے۔ ویسے مجھے شادی ہوئے چند ماہ ہوئے تھے… اس لیے میں کسی کے بارے میں زیادہ نہیں جانتی تھی۔ میری ساس بھی میرا بہت خیال رکھتی تھیں۔ اس نے مجھے گھر میں کچھ نہیں کرنے دیا۔ تو میں نے ہمیں دن کے لیے آرام کیا۔

شام کو سسر اور بھابھی بھی آگئے۔ سب مل کر کھانا کھانے بیٹھ گئے۔ میں نے اس دن سیاہ رنگ کی شفاف سلکی ساڑھی پہنی تھی۔ جو کہ بحریہ کے لیے بھی کافی جگہ ہے۔ اور میرا بلاؤز بھی لو کٹ تھا۔ میرے چھاتی کے اوپر والا حصہ صاف نظر آ رہا تھا۔ جب میں نے اپنی جان کی خدمت کرنے کی کوشش کی تو غلطی سے میری ساڑھی کا پلو نیچے گر گیا۔ اور میرے بوبس اس کے سامنے کھل گئے۔ مجھے اپنا پلو پہننا پسند ہے لیکن ایسا لگتا ہے کہ میری جان میرے چھاتی کی بھوکی ہے۔ مجھے بہت خوشی محسوس ہوئی۔

میں اپنی گود میں بیٹھ گیا۔ ہماری چمگادڑیں ادھر ادھر حرکت کر رہی تھیں۔ میں نے دیکھا کہ زندگی مجھ پر ظالم ہوتی جا رہی ہے۔ میں نے سوچا کہ نوجوان لڑکا میری طرف دیکھ رہا ہے اور وہ مجھ سے ضرور کچھ کہے گا۔ ویسے گھر جانے کے بعد کون جانے کب کوئی بھیانک کام کرے گا۔ میں نے اپنی ساڑھی کا پلّو بھی تھوڑا سا شفٹ کیا اور چلنے لگا تاکہ زندگی بھر میری جگہیں نظر آ سکیں۔ کس نے میرے چھاتی کو بھی بری نظر سے دیکھا۔ اس کی نظر مجھے بہت پیاری لگ رہی تھی۔

کھانے کے بعد سسر پان کھانے چلے گئے۔ اور میری زندگی ٹی وی دیکھتے ہوئے گزر گئی۔ ہمارے گاؤں میں کوئی گھر نہیں ہے۔ نوعمروں کا کمرہ — ایک باورچی خانہ — اس کے سامنے ہال تھا اور ہال سے ملحق ایک کمرہ تھا جسے بیڈ روم کہا جا سکتا تھا۔ روی اور میں اس میں سو رہے تھے۔ ہال میں ایک ٹی وی تھا جہاں جیون ٹی وی دیکھ رہا تھا۔ میری ساس باورچی خانے میں برتن صاف کرنے لگیں اور روی کمرے میں جا کر بستر پر لیٹ گئی۔ میں اپنے کمرے میں گیا اور دیکھا کہ جیون بیٹھا تھا جہاں سے وہ ہمارے کمرے کا پورا منظر دیکھ سکتا تھا لیکن صرف بستر نظر نہیں آرہا تھا…..یعنی روی اسے نہیں دیکھ سکتا تھا۔

میں نے دروازہ کھلا رکھا اور کپڑے بدلنے لگا۔ کاش میری زندگی میرے کپڑے بدلتے دیکھ لیتی۔ دیوار پر ایک بڑا سا آئینہ تھا جس میں میں زندگی کو دیکھ سکتا تھا۔ میں نے اپنی ساڑھی اتار کر اس کی طرف دیکھا کہ میں زندہ ہوں۔ پھر میں نے اپنا بلاؤز بھی اتار دیا اور اب میں صرف پیٹی کوٹ اور برا میں تھا۔

ایسی حالت میں میرے بال بڑھنے لگے اور میری زندگی زیادہ وقت تک ایسی ہی نظر آئی۔ زندگی کی حالت بہت خراب تھی… اس کے چہرے سے لگ رہا تھا کہ وہ پہلی بار کسی عورت کو ایسی حالت میں دیکھ رہا ہے۔ اس کا ہاتھ اپنی زمین پر چلا اور وہ زمین صاف کرنے لگا۔ پھر میں نے اس کی طرف دیکھا اور مسکراہٹ دی، لیکن میں نے اس کی طرف دیکھا اور ہلکا سا مسکرایا، وہ بھی ہلکا سا مسکرا دیا۔ اب معاشرہ یہ جان چکا ہے کہ سب جانتے ہیں کہ وہ کیا کر رہا ہے۔ تھوڑی دیر بعد میں نے لائٹس بند کر دیں اور سو گیا۔

اگلی صبح میرے شوہر اور سسر کسی تحصیل کے ایک گاؤں گئے۔ میری ساس کی طبیعت تھوڑی سی خراب تھی اس لیے وہ آرام کر رہی تھیں۔ میں صبح سویرے اٹھا۔ گھر کے سارے کام میں سنبھالتی تھی۔ زندگی بھی تھوڑی دیر سے اٹھی ورنہ رات بھر میرے بارے میں سوچ کر ایسا نہ ہوتا۔ وہ بھی نہا کر کھیتوں کی طرف روانہ ہو گیا۔میں نے اپنی ساس کو بھی بتایا کہ میں بھی جیون جی کے ساتھ کھیتوں میں گئی تھی۔ اور میں نے اپنا فارم دیکھا ہے۔ میری ساس نے اجازت نہیں دی۔

میں جان لے کر موٹر سائیکل پر کھیتوں کو نکلا۔ آج پھر میں نے وہی گہرے رنگ کی شفاف ساڑھی اور لو کٹ بلاؤز پہن رکھا تھا۔ خراب سڑک کی وجہ سے گاڑی بار بار چلتی رہی تو میرے بوبس میری جان کی پشت پر تھے اور بار بار تباہ ہو رہے تھے۔ میں نے اسے پکڑنے کے لیے اس کے عضو تناسل پر ایک ہاتھ رکھا اور اس نے کہا، بھابھی، اسے ہٹا دیں، وہ نشہ میں ہے۔ مجھے لگا کہ اس کی زمین چھین لی گئی ہے۔ ہمارا کھیت گاؤں سے چند کلومیٹر کے فاصلے پر تھا۔ ہم میدان میں پہنچ گئے۔ میدان میں گھر گھر کوئی نظر نہیں آتا تھا۔

جس نے مسکرا کر کہا بھابھی آپ نے چوہے کی کیا تربیت کی ہے؟
میں نے کہا، "وہ مجھے چوہے سے بھی بڑا لگتا ہے" اور وہ مزید اس سے لپٹ گیا۔ اور زور زور سے مارنے لگا، اب میرا پورا جسم اس کے جسم سے چپک گیا تھا۔ اس نے بھی میری پیٹھ پر ہاتھ رکھا اور مجھے اپنی طرف کھینچا اور مجھے اپنی بانہوں میں پکڑ لیا۔ میں وہاں گیا اور کچھ نہیں ملا لیکن تھوڑی دیر بعد مجھے لگا کہ مجھ پر جان کچھ بڑھ گئی ہے اور میرے چھاتی شہد دبا رہے ہیں………. نیچے والے حصے میں بہت دباؤ تھا اور میں نے محسوس کیا کہ یہ جیون کا ڈک تھا جو دھکا دے رہا تھا اور میں نے جیون کو اپنے دونوں ہاتھوں سے دھکیل دیا تھا۔ میرے منہ سے بھی نکلا۔

اس نے کہا بھابھی یہ کیا ہے؟
میں نے کہا، ’’زندگی نہیں‘‘۔ اور وہ مجھ میں مختلف ہو گیا۔ جیون مکمل طور پر پرجوش تھا ،،،،،،،،، لیکن میں نے اسے تھوڑا سا ٹھنڈا کردیا۔

کس نے کہا "کیا بھابی ایپ اسے چھوئے سے داری ہو"۔
میں نے کہا کیا کروں زندگی مجھے چوہے سے بھی بدتر لگتی ہے۔
اس نے کہا، "چلو بھابھی، آپ کی ہمت نہیں ہوگی کہ ایسا لڑکا مجھے ڈانٹتا دیکھے۔"
میں نے کہا، "یہ ایسا ہی ہے، میں یہ نہیں کر سکتا۔"
اس نے کہا سچ کیا ہے بھابھی، تنقید کرنے کی بجائے اسے دیکھو گے تو پیار کرنے لگو گے۔
میں نے کہا ’’ایسا ہی ہے، مجھے ایسی کتیا سکھا دو کہ تم مجھے ڈانٹنے کی بجائے مجھ سے پیار کرو۔‘‘

اس نے کہا پھر چلتے ہیں
میں نے کہا "کہا"
اس نے کہا، میری پیٹھ میں کپاس کا کھیت ہے جس میں سفید رنگ کے بڑے چوہے ہیں۔

وہ اشارے کر رہا تھا اور بولا ہمارے کھیت میں۔ میں آپ کے علاوہ کسی کو نہیں ڈانٹنا چاہتا۔"

میں نے کہا، "یہ کیسا چوہا ہے؟"
اس نے کہا، "یہ ہمارے چوہوں کے لیے ایک خاص جگہ ہے۔"
میں نے کہا، "ٹھیک ہے، چلو۔" اور ہم کھیتوں کے درمیان چل پڑے۔
میں نے کہا تم چوہے کہاں ہو؟
اس نے کہا، "تھوڑا صبر کرو، میں تمہیں ابھی دکھاتا ہوں" اور اس نے اپنی پینٹ نیچے کی اور اپنا انڈرویئر بھی اتار دیا، اور اس کا عضو تناسل باہر نکل آیا۔ ’’دیکھو بھابھی کیسی لگ رہی ہو ڈارلنگ۔‘‘

میں نے اپنی ٹوپی سے آنکھیں بند کر لیں۔
جیون "بھابی کا ہاتھ دے کر دیکھوں گا"
میں "اگر آپ کو اپنا بھائی مل گیا تو زندگی آپ کے پاس جائے گی۔"
جیون "بھابی سے بات مت کرو اور تم بھی چپ رہو۔"

گیا اپنی زمین کو دیکھ کر حیران رہ گیا۔ اس کے پاس کافی بڑا ڈک تھا۔ اس نے کہا بھابھی آپ کیا کہتی ہیں آپ نے میرا پیار کیوں پہنا ہوا ہے،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،، ,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,. اس سے بات کرتے ہوئے کہا، "نہیں، نہیں، یہ میری پیاری بھابھی ہے۔" چوہا مجھے بہت پسند ہے۔

میں نے اس کی زمین اپنے ہاتھ میں پکڑی اور اسے استعمال کرنے لگا۔ کافی دیر تک میں نے اس کی زمین کو پیار کیا، اس کے بعد سے اس کی زمین کا سائز اور بھی بڑا ہو گیا تھا۔ جیون نے اپنی منی میرے پورے جسم میں ڈال دی اور اس کی منی میری پینٹی تک پہنچ گئی….اس نے چاٹ کر پینٹی کو باہر نکالا…..میرے جسم پر ایک ساڑھی تھی اور اس پر پیٹی کوٹ تھا اور پھر پینٹی غائب تھی…اب جیون وہ شروع ہوگئی۔ میری بلی انگلی.

اس نے مجھے اپنی اندام نہانی میں بٹھایا اور میرا بلاؤز اور چولی اتار دی اور اپنی پوری طاقت سے میری چھاتیوں کو چومنے لگا، میری آواز گونجنے لگی۔ غریب جلد کے بال

جیون- "بھابھی، آپ نے طاق سے بال کیسے ہٹا دیے؟ جلد کتنی ملائم ہے۔"
میں، "میرے بھائی کی فکر نہ کرو، میں تمہیں خود نکال دوں گا، تم اس کالے جنگل میں مر جاؤ گے۔"
جیون "بھابھی آپ جنگل کا درخت کھائیں گی"

ہم دونوں چومنا شروع کر چکے تھے، پھر جیون نے مجھے ایک لمبا فرانسیسی بوسہ دیا اور میرے اوپری جسم کو چومنا شروع کر دیا، مجھے بہت پرجوش محسوس ہوا aaaaahhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhh… devarji… jor jorse………… ragdo… bada……… maja……………..aaaa ………راہا..ہے……… uhiiiiiiiii…aaaaaaaaaa..hhhhhhhaaa…….."

جس کی نظر بری تھی وہ میری چھاتیوں کی طرف راغب ہوا۔ اور جوس بھی تھا۔ کافی دیر تک وہ میرے کلیٹورس کو چوستا اور رگڑتا رہا۔ یہاں تمہارے کانوں نے میری میلی چھاتیوں کو سرخ کر دیا ہے۔

جیون "بھابھی، اب آپ کو میرے چوہے کو سوراخ میں دھکیلنا ہوگا۔
میں نے کہا، "دیوارجی، اس بوسے کی وجہ سے اپنے چوہے کو میری چوت میں مت ڈالو۔"

جیون نے میری کمر تک میرے تمام طاقوں کو ڈھانپ دیا اور پیٹی کوٹ بھی ہٹا دیا، پھر اس نے اپنی ٹانگیں پھیلائیں اور اپنا ڈک میری بلی پر رکھا اور ایک ہی بار میں پوری ڈک کو دھکیل دیا۔ pussy] نے اسے میرے اندر ڈال دیا۔ میں بہت تکلیف میں تھا اور میری aaaaaaaaaaaaaaahhhhhh باہر آگئی جیسے کسی نے ٹھوس چیز داخل کی ہو ……… .. جیون کا ڈک بہت سخت ہو گیا تھا mmmmmm mmmmmmmmmmmmmm. اور جس نے آہستہ آہستہ اپنا لنڈ میری چوت میں چھوڑنا شروع کر دیا۔


اب دھیرے دھیرے مجھے بھی لذت محسوس ہونے لگی، آنکھوں پر پٹی شہد اور سانس لمبی شہد آااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااااا. ہیئر بیٹ ٹرین کی طرح جیون کا ڈک آخر تک گھس چکا تھا… دو ٹوپیاں میری چھاتیوں کو دبا رہی تھیں، بلی اس طرح پھیلی ہوئی تھی… میری ٹانگیں ہوا میں تھیں اور جیون کا وزن… میرے اوپر، وہ کمزور وزن۔ اس کا ڈک اسے میری گانڈ میں دھکیل رہا تھا… میں ٹھنڈی ہوا کے میدان میں چل رہا تھا لیکن مجھے بہت پسینہ آ رہا تھا۔

اور میں بھی اس کے ساتھ آواز بلند کرنے لگا۔ جس نے رفتہ رفتہ اپنی رفتار بڑھانا شروع کر دی۔ اس کا ڈک میری بلی کو چودنے لگا۔ مائی سے ساتویں آسمان پر تھی. بہت مزہ آیا۔ وہ بھی اپنی بھابھی کی جوانی کے بڑے بڑے لنڈ کے ساتھ میری چوت کو چود رہا تھا اور میں بھی اپنی پیاری دیورکا لںڈ کی مزے سے پیار کر رہا تھا۔

اب سے اس کے رافٹر کی پچو چٹائی پر ، کافی گائی باڈ ہے گویا کچھ ایکسپریس اوو او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او او۔

چوت سے پانی نکل رہا تھا …………… پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ پانچ کی آواز تھی ۔ میں بھی اس کی زمین کو تلاش کرنے کے لیے اپنے جسم کو اوپر نیچے کر رہا تھا۔ جو تقریباً 20 منٹ تک مجھے چودتا رہا۔ جیون ڈسچارج شہد والا تھا اسنی نے اپنا عضو تناسل نکالا اور اس میں منی خارج کی اور پھر اپنا عضو تناسل میرے منہ تک لے آیا۔

میں "نہیں بھابھی، منہ میں نہیں"

جیون نے میری تصویر کے ساتھ میرے عضو تناسل کو چھوا۔

میں نے کہا، "بہن، اپنی حد میں رہو، یہ تمہارے جسم کو تکلیف ہو رہی ہے، جس نے مجھے تمہارے سر میں رکھا ہے، اپنی حد میں رہو اور سب کو بتاؤ کہ تم نے خود کو مجھ پر مجبور کیا ہے۔"

جیون "نہیں بھابھی ناراض نہیں ہیں ..آپ غلط طریقے سے اکٹھے جھوٹ بول رہی ہیں ..میں آپ کے چھاتی پر ناراض نہیں ہوا"

میں "سیٹا پلیز اپنی حد میں رہو میں تم سب کا انتظار کروں گا۔"

ہم دونوں نے بھی الوداع کہا۔ ہم کافی دیر وہاں اسی طرح کھڑے رہے، جس کے بعد میں نے کہا – میں نے اپنے سفید کپڑے پہن لیے اور ٹیوب ویل پر گیا، ہم دونوں نے خود کو صاف کیا… اور وہاں سے نکل آئے… سب کچھ نارمل ہو گیا تھا،،،،، میں نے یہ اور جیون نے مجھے غریب گاؤں کے دورے پر 4 بار چود لیا….لیکن میں نے جیون کو بھی اپنا کتا بنا لیا…..لیکن میں نے اس کے آگے نہیں ہارا…..میرے نزدیک اس کی عزت کتے کے برابر تھی۔
Next Post Previous Post
No Comment
Add Comment
comment url